May 25, 2009

بامِ زبانِ طور

بامِ زبانِ طور و دُرُودِ معراج
عقلِ دنگ خلقِ جہاں کل بھی اور آج

قوتِ ارادی مومن ھما کی نہیں محتاج
ابابیل بھی کر دیتے ہیں لشکر تاراج

کَلِمَہ حق کا ساتھ نبھایا جب تھا مکمل کفرِ راج
پرواز میں شہباز مقام ان کا بالاج

باغی ہیں جو آباؤ اجداد کے رسم و رواج
عشق محمدؑ کا انہیں مرض لاحق ہوا لا علاج

موسل بار : محمودالحق
در دستک >>

گلاب جازبِ حسن

گلاب جازبِ حسن تابناک صراحی
مستیء میلہ میں مگن عدن زن و راہی
دلفریب ہیں بہت محفل رقص و سرور
بے حجاب بدن مثل بے آب ماہی
میراث فقیری میں نہیں غسل ابن درویش
جشنِ نوروز میں نہلاتی عرقِ گلاب سے پادشاہی
حمد کی ادراک ہی میں تو ہے ربائی
لاالہ الا اللہ ہی تو ہے اصل گواہی
نورِ اسم پاک کی ایک کرن کا طالب ہوں
جلوہ ہے تیرا گر خاک پا ہو جائوں ہمراہی
اس راز پوشیدگی میں کیا نکتہ کمال ہے
تیری امانت کو سنبھالا کئے ایک ماہی
میرا نفسِ آئینہ دکھائے میرا ہی عکس مجھے
دے میرے قلب کو ہیرے سی جراحی
نہ دیکھ رعونت بھرے فلک پوش پہاڑ
پھٹ جائیں تو اگل دیں تباہی
نہیں رکھتا اشتیاق پوشاکِ اجماعی
درویشوں کی تو ردا ہی میں ہے شاہی


موسل بار : محمودالحق
در دستک >>

بادِیَہ نگاہ سخن

بادِیَہ نگاہ سخن رُو آبرو آزمائے جا
چرخِ زنداں میں ہستی آرزو مٹائے جا

میر کارواں جو ہو کاہن و دہن
مریض نسیم صبح پہ زادِ راہ لٹائے جا

لذتِ درویشی میں ہے سحرِ مسیحائی
جوش ذوقِ وصل میں آبلا پا جائے جا

برزخِ محلِ قوس و قزح بر بنائے خشِ پاک
نوازشات الہٰی پر شکر آنسو بہائے جا

موسل بار : محمودالحق
در دستک >>

تازہ تحاریر

تبصرے

سوشل نیٹ ورک