May 25, 2009

گلاب جازبِ حسن

گلاب جازبِ حسن تابناک صراحی
مستیء میلہ میں مگن عدن زن و راہی
دلفریب ہیں بہت محفل رقص و سرور
بے حجاب بدن مثل بے آب ماہی
میراث فقیری میں نہیں غسل ابن درویش
جشنِ نوروز میں نہلاتی عرقِ گلاب سے پادشاہی
حمد کی ادراک ہی میں تو ہے ربائی
لاالہ الا اللہ ہی تو ہے اصل گواہی
نورِ اسم پاک کی ایک کرن کا طالب ہوں
جلوہ ہے تیرا گر خاک پا ہو جائوں ہمراہی
اس راز پوشیدگی میں کیا نکتہ کمال ہے
تیری امانت کو سنبھالا کئے ایک ماہی
میرا نفسِ آئینہ دکھائے میرا ہی عکس مجھے
دے میرے قلب کو ہیرے سی جراحی
نہ دیکھ رعونت بھرے فلک پوش پہاڑ
پھٹ جائیں تو اگل دیں تباہی
نہیں رکھتا اشتیاق پوشاکِ اجماعی
درویشوں کی تو ردا ہی میں ہے شاہی


موسل بار : محمودالحق

0 تبصرے:

Post a Comment

تازہ تحاریر

تبصرے

سوشل نیٹ ورک