Dec 18, 2009

اہل اِیمان کی گریہ

اہل اِیمان کی گریہ میں سکوتِ کائنات
بائیں عملِ غافل میں شور و غوغہء حاجات

لوحِ تقدیر میں لکھے با سبب اسباب
انسان اپنے ہی تئیں میں عملِ مکافات

ارضِ شوی میں ہے عاجزیء شبیری
منزلِ نوید میں ہے خوشہء انجیرِ التفات


را مقابل ہر زہ محاصل مشاہیر
اک قطرہ بقاء میں تاثیرِ طبیبِ کائنات

پردہ سیمیں مزّین رنگِ بالاج
خیرہ نہ کر دے کہیں آبِ انگور مشکات

نارْکِ تحریم تکبیرِ قیام مقامِ رکوع
سجود ہی پہنچائے تجھ کو تا منزلِ نجات

مانع طور و نور غائب و حضور
حرف بہ حرف لفظ بہ لفظ یہ صادق آیات

کھلے جو بامِ در میرا غنچہء نصیب میں
سخنِ سوز و جاں میں نہ رہے دل کی بات

موسل بار : محمودالحق

0 تبصرے:

Post a Comment

تازہ تحاریر

تبصرے

سوشل نیٹ ورک