May 11, 2010

میرے گھر کے بادل گرج کر گزر گئے

میرے گھر کے بادل گرج کر گزر گئے
تیرے گھر کے بادل برس کر بکھر گئے

میری شاخِ شجر کے پتے اتر گئے
تیرے پھول بھی کھل کر نکھر گئے


میری مٹی میں فراقِ ہجر گئے
مہک بنی ہوا تیری جدھر گئے

بھولِ آنکھ میں میری اشکِ تر گئے
آنسو بھی تیرے بن اَبر گئے

میری کھلتی کلی سے بھی ثمر گئے
تیرے گرتے بیج بھی بن شجر گئے

پیالہ میرے میں بھر وہ زہر گئے
کشکول تیرے میں ڈال اثر گئے

خاکِ سکوت میں خوف ٹھہر گئے
روحِ رواں میں تیرے مد و جزر گئے

میرے عشق میں بینا بھی تو نظر گئے
تیرے حسن کے تارے بن اطہر گئے

شکوہ نہیں رہ اب عزر گئے
رحمت سے بھی اب ہو احمر گئے

دبیز تہہ بھی اب بن راہ گزر گئے
رکتے شب میں دن میں سفر گئے

دل لگی رکھی تو چلے دلبر گئے
نظر سے جو چوکے تو قلب میں نشتر گئے

ڈھونڈھتے ہم انہیں نہ جانے کدھر گئے
کچھ اِدھر تو کچھ رہ اُدھر گئے

نفرت نشاں رہ اب بشر گئے
شاھین کے دوست بن کبوتر گئے

بچاتے نہیں جو جل شرر گئے
قلم سے جب نکلے تو بن نشر گئے

کبود انعام سے بھی وہ مکر گئے
سانس لینے میں ہی وہ سجدہ شکر گئے

نام لینے سے جن کے جھک سر گئے
سجدہ میں ہی ان کے ہو بلند فخر گئے



بر عنبرین / محمودالحق

0 تبصرے:

Post a Comment

تازہ تحاریر

تبصرے

سوشل نیٹ ورک